جمعرات , 13 دسمبر 2018

کشمور : ایس ایس پی آفس میں جعلی بھرتی و اور کرپشن

کشمور : ایس ایس پی آفیس میں جعلی بھرتیوں اور کرپشن کا معاملہ

ایس ایس پی آفیس کے معطل اکاؤنٹینٹ بشیر برڑو اور ٹولے نے 238 جعلی پولیس اہلکار بھرتی کئے۔ ایس ایس پی آفیس ذرائع

یہ بھرتیاں 2012 سے لیکر 2015 دوران کی گئیں۔ فی ملازمت کے آرڈر پہ 6 لاکھ سے لیکر 8 لاکھ روپے لوگوں سے وصول کئے گئے

بشیر برڑو نے سابق ایس ایس پیز سے ملکر 100 اور آفیسراں کے جعلی دستخط کر کے 138 سے آرڈر جاری کئے. سابق اکاؤنٹینٹ بشیر برڑو نے صرف جعلی آرڈر جار ی نہی کئے بلکہ جعلی دستخط سے فنڈز میں کرپشن بھی کی

بشیر برڑو کے ساتھ ڈسٹرکٹ خزانہ آفیس اور نیشنل بینک کا عملہ بھی ملوث ہئے۔
کندکوٹ۔ ایس ایس پی بشیر احمد بروھی نے تمام جعلی بھرتئ کئے گئے ملازمین کو کام سے روک دیا ہئے اور تنخواہیں بند کرنے کا حکم جاری کردیا

آئی جی سندھ نے اکاؤنٹینٹ بشیر برڑو کی کرپشن کا نوٹس لیا تھا بشیر برڑو سمیت 4 اہلکاروں کو معطل کیا تھا

آئی جی سندھ ای ڈی خواجہ نے انکوئری کے لئے ای آئی جی آفتاب پٹھان کی سربراہی میں کامیٹی تشکیل دی تھئ۔

رشید احمد سومرو 72 نیوز ڈسٹرک کشمور

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے