سعودی عرب میں پہلی خاتون نے فلموں کی درآمد اور تقسیم کا لائسنس حاصل کرلیا

ریاض: سعودی عرب میں پہلی مقامی خاتون نے فلموں کی درآمد اور تقسیم کا لائسنس حاصل کرکے مملکت میں خواتین کے متحرک کردار کے حوالے سے ایک اور نظیر قائم کردی۔

تفصیلات کے مطابق خلود عطار نے سعودی عرب میں فلمی صنعت کا روشن مستقبل دیکھ کر فلمیں درآمد کرنے اور انھیں ملک میں تقسیم کرنے کا لائسنس حاصل کرنے کا فیصلہ کیا۔

یہ سعودی عرب میں فلموں کی تقسیم کا پہلا لائسنس ہے جو کسی خاتون نے حاصل کیا ہے، جس سے مملکت کے جدید بنیادوں پر استوار ہونے کے سلسلے میں خواتین کے کردار کی شمولیت کا پتا چلتا ہے۔

خلود عطار سعودی آرٹس کونسل کی رکن ہیں، ان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب میں فلمی صنعت کا مستقبل تاب ناک ہے، میں اس اہم سیکٹر میں اپنا کردار ادا کرنا چاہتی ہوں، لیکن میری ساری توجہ سعودی فلموں پر ہوگی، غیر ملکی فلموں پر نہیں۔

انھوں نے لائسنس کے حصول کے حوالے سے تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ ہفتہ دس روز میں تمام کارروائی مکمل ہوگئی تھی اور انھیں کسی مشکل کا سامنا نہیں کرنا پڑا۔ دوسری طرف امریکی جریدے فوربز نے خلود عطار کو سعودی عرب کی متاثر کن شخصیات کی فہرست میں شامل کردیا ہے۔

خلود عطار نے بتایا کہ ایسی کہانیاں جو تاریخی یا سماجی پہلو رکھتی ہیں، انھیں سعودی معاشرے میں فلم کی صورت میں پیش کیا جاسکتا ہے، یہی وجہ ہے کہ انھوں نے ابتدا میں فلم ’بلال‘ اور دیگر مختصر فلموں کی تقسیم کے حقوق حاصل کیے ہیں۔

واضح رہے کہ خلود عطار گزشتہ دس برس سے ڈیزائننگ سے متعلق ایک میگزین شایع کر رہی ہیں جس نے گرافکس، سول انجینئرنگ اور فوٹو گرافی کے شعبوں میں بہت سارا مقامی ٹیلنٹ متعارف کرایا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے