اتوار , 17 نومبر 2019

لاہور کی تمام پراپرٹی ایسوسی ایشن کا بجٹ کے خلاف پنجاب اسمبلی کے سامنے احتجاج۔

رئیل اسٹیٹ کے بزنس سے منسلک پراپرٹی ڈیلرز لاہور کی مختلف ٹاون کی تنظیموں نے پنجاب اسمبلی کے سامنے بجٹ میں لگائے گئے پراپرٹی پر بے تحاشہ ٹیکسز کے خلاف احتجاج کیا اور حکومت سے مطالبہ کیاہے کہ پراپرٹی کے کاروبار سے چالیس سے زائد شعبہ جات وابستہ ہیں اور حکومت کی جانب سے بے جا ٹیکسزسے ان کا معاشی قتل بندکیاجائے اور کیپیٹل گین ٹیکس کی مدت کو دس سال کے بجائے تین سال تک برقراررکھاجائے تاکہ یہ انڈسٹری تباہی سے بچ جائے، ایف بی آر اور ڈی سی ریٹس ڈبل کرنے سے حقیقی ویلیو سے بھی کئی گنا زیادہ کرنے سے انڈسٹری تباہی کے دہانے پرآکھڑی ہوئی ہے جس سے اوورسیزپاکستانی ، سینئرسٹیزن، بیوہ اور ریٹائرڈسرکاری ملازمین کو بھی کوئی رعایت نہیں دے گئی جو عوام کے ساتھ ظلم ہے۔ اس موقع پر صدرڈی ایچ اے ایسوسی ایشن محمد ابوبکر بھٹی، جنرل سیکرٹری میاں شاہد محمود،چیئرمین ڈی ایچ اے ملک آصف جہانگیر، صدرلاہور فیڈریشن طاہرمسعود،جنرل سیکرٹری میاں نعیم ودیگرنمائندوں موجود تھے۔سابقہ حکومت کے وزیرخزانہ اسحاق ڈار نے رئیل اسٹیٹ کے اوپر شب خون مارا جب کہ موجودہ حکومت سے وابستہ امیدوں کے الٹ ہوا ہے ۔ انھوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ ان کے جائز حقوق فوری مانے جائیں بصورت دیگر تمام صوبائی اور قومی اسمبلی کے سامنے دھرنا دینے پر مجبورہوں گے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے