جمعہ , 24 جنوری 2020

مریم نوازنا خوش ،کیا کرنے جا رہی ہیں ؟ بڑا اشارہ دیدیا

پاکستان مسلم لیگ نون نے آرمی ایکٹ میں ترمیم کا حصہ نہ بننے کا فیصلہ کرلیا ہے۔سابق وزیراعظم نواز شریف نے پارٹی رہنماوں کو بل منظوری کے وقت کاروائی کا حصہ نہ بننے کی ہدایت کی ہے۔مریم نواز نے نون لیگ کے فیصلے پر مخالفت کرکے میاں نواز شریف کو اپنے فیصلے سے آگاہ کیا تھا۔مریم نواز نے پارٹی عہدے سے مستعفی ہونے کا بھی اشارہ دے دیا تھا۔میڈیا رپورٹس کے
مطابق مریم نواز نے ٹویٹر صارف کی ٹویٹ کو بھی لائک کیا،اس ٹویٹ میں آرمی ایکٹ میں مشاورت نہ کرنے کا بھی ذکر ہوا ہے۔اس کے علاوہ مریم نواز کا گھر میں قید کاٹنے کا ذکر بھی موجود ہے۔اس کے علاوہ بھی اس روایت میں کئی ایسی باتیں کی گئی ہیں جن میں کہا گیا کہ مریم نواز کو آرمی ایکٹ میں ترمیم کا حصہ بننے پر ان بورڈ نہیں لیا گیا۔ ٹویٹرصارف نے لکھا کہ’’سو فیصد گارنٹی دے سکتا ہوں کہ مریم نوازشریف سے کوئی مشاورت نہیں کی گئی۔ سب پوچھتے ہیں مریم نوازشریف کیوں خاموش ہیں ۔ کسی کو نہیں معلوم کہ مریم نوازشریف اس وقت جو قید گزار رہی ہیں وہ اس قید سے زیادہ تکلیف دہ ہے جو قید انہوں نے جیل میں گزاری ۔ واضح رہے کہ دو روز قبل آرمی ایکٹ میں ترامیم کے حوالے سے سابق وزیراعظم نواز شریف اور پارٹی صدر شہباز شریف کے درمیان مشاورت کی گئی۔ن لیگ نے آرمی ایکٹ میں ترامیم پر حکومت کی حمایت کرنے کا فیصلہ کیا تھا ۔تاہم اس معاملے کو لے کر شریف خاندان میں اختلافات پائے جا رہے ہیں۔اس بات کا انکشاف ہم نیوز سے منسلک صحافی ثاقب راجہ نے کیا ہے۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ٹویٹ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ آرمی چیف ایکسٹینشن ترمیم پر حکومت کا ساتھ دینے پر شریف برادران اور مریم کے درمیان شدید اختلافات کی اطلاعات ہیں شہباز شریف کو اچانک ایون فیلڈ طلب کیا گیا اور صورتحال پر مشورہ کیا گیا. واپسی پر شہباز شریف نے میڈیا کو مکمل اگنور کرکے نکلنے میں ہی عافیت جانی.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے